Skip to Content

Friday, September 22nd, 2017

ریزلٹس نے گرامین بینک اور اس کی آٹھ ملین سے زائد خواتین قرضداروں کے حق میں کھڑے ہونے والے اراکین کانگریس اور عالمی رہنماؤں کو سراہا

Be First!

واشنگٹن، 19 اگست 2013ء/پی آرنیوزوائر/ ایشیانیٹ پاکستان–

بنگلہ دیش کی وزیر اعظم حسینہ واجد کے لیے کھلے خطوں میں اراکین کانگریس اور مختلف عالمی ماہرین نے حکومت بنگلہ دیش سے گرامین بینک کی آزاد حیثیت کو برقرار رکھنے کا مطالبہ کیا ہے۔ گرامین بینک بنگلہ دیش میں تقریباً 8.4 ملین غریب ترین خواتین کو ضروری خدمات فراہم کرتا ہے۔

یہ کھلے خطوط حکومت کے مقرر کردہ گرامین بینک کمیشن کی حتمی رپورٹ سے قبل آئے ہیں۔ کمیشن کے جو ن2012ء کے ورکنک پیپر میں وہ سفارشات شامل ہیں جو بینک پر قرض داروں کی گرفت کو ختم کردے گا، جو اس وقت گرامین بینک کے 97 فیصد حصص اور بینک کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کی 13 میں سے نو نشستوں کے حامل ہیں۔ سفارشات میں حکومت کو بینک میں اکثر حصص اور بینک کے بورڈ میں بیشتر نشستیں دینا اور بینک کو 19 یا زیادہ مختلف حصوں میں تقسیم کرنا شامل ہیں۔

گرامین بینک کے بانی اور سابق مینیجنگ ڈائریکٹر نوبل انعام یافتہ پروفیسر محمد یونس کو مئی 2011ء میں جبراً عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا۔ ایک سال بعد حکومت نے گرامین بینک کے آپریشنز پر نظرثانی کے لیے کمیشن مقرر کیا کہ وہ مستقبل کے لیے سفارشات مرتب کرے۔ کمیشن کا دورانیہ 20 جولائی کو ختم ہوا لیکن حتمی رپورٹ اب بھی جاری نہیں کی گئی۔ اب جبکہ یہ واضح نہیں کہ رپورٹ کب ظاہر کی جائے گی، یہ سمجھا جا رہا ہے کہ عبوری رپورٹ میں پیش کردہ چند نقصان دہ سفارشات کو حتمی رپورٹ میں برقرار رکھا جائے گا۔ اگر انہیں نافذ کیا گیا تو یہ بینک کی آزادانہ حیثیت کا خاتمہ کر دیں گی اور اس کے اہم کام کو نقصان پہنچائیں گی۔

امریکی سینیٹ اور ایوان نمائندگی کے 32 اراکین اور 40 بین الاقوامی رہنماؤں کی جانب سے وزیر اعظم حسینہ کو جاری کردہ کھلے خطوط بالترتیب واشنگٹن پوسٹ اور انٹرنیشنل ہیرالڈ ٹریبیون میں شائع ہوئے۔

یوان کارٹر، ایگزیکٹو ڈائریکٹر ریزلٹس (RESULTS) اور ریزلٹس ایجوکیشنل فنڈ نے مندرجہ ذیل بیان جاری کیا:

“آج دنیا بھر کے رہنماؤں، بشمول امریکی کانگریس کے32 اراکین، نے بنگلہ دیش کی وزیراعظم حسینہ واجد پر زور ڈالتے ہوئے انقلابی مائیکروفنانس ادارے گرامین بینک اور اس کے تقریباً 8.4 ملین قرضداروں کی حفاظت کا مطالبہ کیا ہے۔ میں ان خطوط کو شدت سے سراہتا ہوں۔

“گرامین بینک جدید اور موثر مائیکروفنانس اور غربت کو کم کرنے کی کوششوں کا ہی نہیں بلکہ بنگلہ دیش کی دیہی و غریب خواتین کو خودمختار بنانے کے کام میں بھی طویل عرصے سے رہنما ادارہ ہے۔ اس کا بے مثال اور انقلابی ماڈل دنیا بھر کے مختلف ممالک میں رشک کی نظروں سے دیکھا جاتا ہے۔ گرامین بینک کے قرضداروں کی اکثریت خواتین پر مشتمل ہے، جو بینک میں 97 فیصد حصص رکھتے ہیں اور بورڈ آف ڈائریکٹرز میں 13 میں سے نو نشستوں کے حامل ہیں۔ حکومت کی جانب سے قرضداروں کے حصص کی نگرانی کرنے، بحیثیت مجموعی بینک کے ڈھانچے، یا بورڈ آف ڈائریکٹرز کو چلانے والے قوانین اور عوامل میں تبدیلی کی کوشش ان خواتین کے انسانی و قانونی حقوق کو زبردست دھچکا ہوگا۔ مزید برآں، حکومت کی جانب سے ایسی انتہائی ناپسندیدہ مداخلت بنگلہ دیش میں بحیثیت مجموعی سول سوسائٹی کی خودمختاری کو بھی خطرے سے دوچار کرے گی جو صحت، تعلیم اور غربت کے خاتمے کی سمت بنگلہ دیش کی ترقی کی اہم محرک ہے۔

“اب جبکہ ہم کمیشن کی حتمی رپورٹ کے منتظر ہیں، ان خطوط نے وزیراعظم حسینہ کو ایک زوردار پیغام دیا ہے کہ ایسی سفارشات کو مسترد کردیں جو گرامین بینک کے ڈھانچے اور حودمختاری کو خطرے میں ڈال دیں گی۔

“ہم اب تک کانگریس انتظامیہ اور اراکین کی جانب سے اٹھائے گئے اقدامات پر شکرگزار ہیں اور وزیر خارجہ جان کیری، اوبامہ انتظامیہ اور اراکین کانگریس سے شدت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ بینک کی آزادانہ حیثیت کے دفاع کے لیے سنجیدہ کوششوں کو جاری رکھیں۔ امریکہ کو وزیراعظم حسینہ پر زور ڈالے کے لیے تمام دستیاب سفارتی ذرائع استعمال کرنے چاہئیں کہ وہ گرامین بینک کے خلاف اپنی مہم سے دستبردار ہوجائیں اور اسے آزادی کے ساتھ کام کرنے دیں، ساتھ ساتھ یقینی بنائیں کہ دنیا بھر کی دیگر موثر حکومتیں بھی اس مطالبے میں شریک ہوں۔

“دہائیوں سے گرامین بینک غریب عورتوں،ان کے اہل خانہ اور برادریوں کو غربت سے نکلنے اور ترقی کی راہوں پر گامزن ہونے کا موقع فراہم کرچکا ہے۔ اسے بغیر کسی مداخلت کے بنگلہ دیش کے عوام کو خودمختار بنانے کے عمل کو جاری رکھنے کی اجازت حاصل رہنی چاہیے۔”

گرامین کے حق میں کھڑے عالمی رہنماؤں میں شمولیت کے لیے یہاں پر Change.org کی پٹیشن پر دستخط کریں ۔

ریزلٹس امریکہ اور دنیا بھر میں غربت کے خاتمے کے لیے ایک توانا آواز ہے۔ مزید معلومات کے لیے دیکھیں www.results.org/grameen۔

The post ریزلٹس نے گرامین بینک اور اس کی آٹھ ملین سے زائد خواتین قرضداروں کے حق میں کھڑے ہونے والے اراکین کانگریس اور عالمی رہنماؤں کو سراہا appeared first on AsiaNet-Pakistan.

Previous
Next

Leave a Reply