Business School Graduates Enter White-Hot Job Market as Employers Signal Growth, Confidence in Their Credentials

MBA and business master’s degrees remain hot commodity despite recession fears and COVID challenges

RESTON, Va., June 29, 2022 (GLOBE NEWSWIRE) — The Graduate Management Admission Council (GMAC), a global association of leading graduate business schools, today released its annual hiring report, the GMAC Corporate Recruiters Survey – 2022 Summary Report. The report explores the state of employer demand for graduate business school talent (MBA and business master’s degree recipients) in the context of the COVID-19 pandemic and includes responses from nearly 1,000 corporate recruiters and staffing firms around the world. While rising inflation and the war in Ukraine were just at the onset during the time when the survey was conducted in February and March 2022, hiring projections of graduate management education (GME) graduates remain bullish this year, with 92 percent of corporate recruiters expecting to hire newly minted MBAs. Promisingly, 2 in 3 responding corporate recruiters describe the current direction of their organization as expanding or growing (67%) and a similar proportion plan to increase their overall headcount (65%). Also, most recruiters (63%) project that demand for new business school talent will increase in the next five years, with business master’s hiring intention the highest among recruiters for East and Southeast Asia and Middle East companies.

“The latest GMAC findings of the Corporate Recruiters Survey show that nearly 9 out of 10 corporate recruiters feel confident or highly confident in the ability of business schools to prepare students to be successful in their organizations,” said Sangeet Chowfla, president and CEO of GMAC. “That’s an extraordinary figure. It shows that despite the pandemic and the limitations it brought on student mobility, public and mental health, and remote learning, business schools managed to find ways to build an impressive cohort whom corporate recruiters and staffing agencies worldwide continue to bank on as prime sources for talent.”

Other Key Findings

MBA starting salaries continue to provide a premium and Business master’s median starting salaries are on the rise

Recruiter responses suggest companies in the United States plan to offer increased starting salaries to business master’s graduates in 2022 compared to last year. In addition, median MBA starting salary levels eclipse those being offered to bachelor’s graduates by 22 percent to 40 percent across the world regions for which there is sufficient sample to report. Median starting salaries are largest in the United States, where the median starting salary offered to new MBA hires this year ─ US$115,000 — has remained unchanged for the past three survey years. In the current inflationary environment, the relative stability of median MBA salaries suggested by the survey findings means the real value of MBA salaries is declining.

In a likely response to combat the effect of inflation, corporate recruiters look to benefits packages—including educational assistance—to meet the changing needs of new graduates. Educational assistance like tuition reimbursement and scholarships has become an increasingly common benefit, with 54 percent offering it in 2022—up from 35 percent last year.

U.S. international hiring bounced back to pre-pandemic levels with potential of continued growth for 2022

The world regions with the highest percentage of recruiters affirming that they plan to hire international candidates in 2022 are the Middle East (52%) and Western Europe (40%). In the United States, this year’s survey results suggest an improving situation for international MBA and business master’s graduates. Looking back at last year’s actual hiring, 43 percent of U.S. recruiters confirmed they hired international talent in 2021—a bounce back from 35 percent in 2020 and 41 percent in 2019. In this year’s survey, 56 percent of U.S. recruiters say that they either plan to make international hires in 2022 (35%) or are willing to (21%), up from 48 percent that said the same in the 2021 survey. Furthermore, 83 percent of U.S. tech companies say they either plan to make international hires in 2022 (62%) or are willing to (21%)—the most of any U.S. industry.

“As travel restrictions ease around the world and student mobility continues to bounce back, we are thrilled to have more international students back on campuses across the country. Our mission is to help our students find success and our graduates reap the benefits of the strong job market in the U.S.,” said incoming GMAC Board Member and Dean of Carnegie Mellon Tepper School of Business Isabelle Bajeux-Besnainou.

Global corporate recruiters appear to be becoming more accepting of online degrees—with the noteworthy exception of the United States

The percentage of global recruiters who view graduates of online and in-person GME programs equally increased from 34 percent in 2021 to 60 percent in 2022, suggesting a significant growth in the acceptance of online programs. However, the notable outlier is corporate recruiters in the United States—where the lion’s share of the world’s online MBA enrollments are. Among responding U.S. corporate recruiters, just 29 percent agree that they view graduates of online and in-person GME programs equally, the lowest of any world region and down from 33 percent of respondents from the 2021 sample.

“The growth of online MBA programs has been so strong in the United States that for the first time, the total number of enrollments in online programs exceeded that of full-time, in-person MBA enrollments in the 2020-21 academic year, according to data from the Association to Advance Collegiate Schools of Business (AACSB),” said Sabrina White, vice president of school and industry engagement at GMAC. “Business schools are presented a unique opportunity to align expectations and outcomes for graduates and employers as online delivery emerges from the pandemic as an important part of the graduate management education industry.”

About the Report
First launched more than two decades ago, the Corporate Recruiters Survey of 2022 was conducted by GMAC, together with survey partners EFMD and the MBA Career Services and Employer Alliance (MBA CSEA), in association with the career services offices at participating graduate business schools worldwide. In a change from previous years, GMAC Research worked with a market research firm to recruit additional participants to make the overall sample more globally representative. In total, 941 respondents from 38 countries completed this survey, including 539 corporate recruiters and 402 from staffing firms. Recognizing that nearly all responses in previous years came from corporate recruiters, only 2022 responses from corporate recruiters were leveraged to create multi-year comparisons. However, the robust sample of corporate recruiters and staffing firms allowed us to develop geographical snapshots in 2022 that were less apparent in previous years.

About GMAC

The Graduate Management Admission Council (GMAC) is a mission-driven association of leading graduate business schools worldwide. Founded in 1953, GMAC provides world-class research, industry conferences, recruiting tools, and assessments for the graduate management education industry, as well as resources, events, and services that help guide candidates through their higher education journey. Owned and administered by GMAC, the Graduate Management Admission Test™ (GMAT™) exam is the most widely used graduate business school assessment.

More than 12 million prospective students a year trust GMAC’s websites, including mba.com, to learn about MBA and business master’s programs, connect with schools around the world, prepare and register for exams and get advice on successfully applying to MBA and business master’s programs. BusinessBecause and The MBA Tour are subsidiaries of GMAC, a global organization with offices in China, India, the United Kingdom, and the United States.

To learn more about our work, please visit www.gmac.com

Media Contact:

Teresa Hsu
Sr. Manager, Media Relations
202-390-4180 (mobile)
thsu@gmac.com

A PDF accompanying this announcement is available at http://ml.globenewswire.com/Resource/Download/3388f75b-1d4e-4329-be0c-ca4a494b76ce

گریٹر بے ایریا میں ضم ہونے والے کیانہائی کے نوجوانوں کے بڑے خواب

شینزین، چین، 29 جون، 2022 /ژنہوا-ایشیاء نیٹ/– ہانگ کانگ ماڈرن سروس انڈسٹری کوآپریشن زون کی اتھارٹی کے اعلامیے کے مطابق 27 جون، 2022 کو  “کیانہائی گوانگ ڈونگ-ہانگ کانگ-مکاؤ-تائیوان یوتھ انوویشن اینڈ انٹرپرینیورشپ مقابلے”  کا باضابطہ طور پر آغاز ہو گیا ہے، جو  مادر وطن ہانگ کانگ کی واپسی کی 25 ویں سالگرہ منانے کے لیے ” شینزن -ہانگ کانگ تعاون برائے مستقبل کی تخلیق” کے سلسلے کی سرگرمیوں کا آغاز ہے۔

بہت سے پرجوش نوجوانوں کے لیے، یہ مزید مواقع اور ایک بہتر آغاز کا وعدہ کرتا ہے۔ گوانگ ڈونگ سے تعلق رکھنے والی ایک نوجوان خاتون، سنی چاؤ، مکاؤ کے مالی تعاون سے قائم ایک کمپنی کی ڈائریکٹر ہیں۔ ان کے پروجیکٹ نے پچھلے سال مقابلے کے فائنل میں نقرئی تمغہ جیتا تھا۔ سنی چاؤ نے کہا، “مقابلے نے ہمیں مختلف جگہوں سے صنعت کے بہت سے ماہرین اور کاروباری شراکت داروں سے ملنے کا موقع فراہم کیا ہے، اور ہمیں انٹرپرینیورشپ کے لیے نئے آئیڈیاز فراہم کیے ہیں۔”

شرکاء کو زیادہ سے زیادہ تعاون فراہم کرنے کے لیے، اس سال کے مقابلے کو مکمل طور پر اپ گریڈ کیا گیا ہے۔ جیتنے والے پراجیکٹس براہ راست انڈسٹری فائنل آف چائنا (شینزین) انوویشن اور انٹرپرینیورشپ مقابلے میں آگے بڑھ سکتے ہیں۔ ون آن ون مشاورت فراہم کرنے کے لیے پیشہ ورانہ سرپرستوں کو متعارف کرایا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ، فاتحین کو کیانہائی شینزین-ہانگ کانگ یوتھ انّوویشن اینڈ انٹرپرینیور حب  (QSHKYIEH) میں آباد ہونے اور متعلقہ ترجیحی پالیسیوں سے لطف اندوز ہونے کے لئے ترجیح دی جا سکتی ہے۔ یہ  ایونٹ تخلیق کار کیمپ، کاروباری مشاورت کے سیشنز اور انویسٹمنٹ میچ میکنگ سیشنز جیسی سرگرمیاں بھی انجام دے گا تاکہ نوجوانوں کے لئے  مذاکرات، تعاون اور آگے بڑھنے کا ایک اچھا پلیٹ فارم بنایا جا سکے۔ مقابلے کے  لئے  چار ذیلی خطوں کا تعین کیا گیا ہے ،جس کی مجموعی انعامی رقم    7 ملین  چائنیز یوآن (CNY ) ہے۔

یہ مقابلہ 2016 سے لگاتار چھ سالوں سے منعقد کیا جارہا ہے، جس میں شرکاء کی مجموعی  تعداد تقریباً 6,000  رہی  ہے، جن میں سے تقریباً 3000 ہانگ کانگ، مکاؤ اور دیگر مقامات سے ہیں۔ متعلقہ سائنسی اور تکنیکی کامیابیوں کی تبدیلی کو فروغ دے کر، کیانہائی بہت سے نوجوانوں کے لیے ایک “خوابوں کی بڑی جنت” بن گیا ہے۔

ہانگ کانگ سےتعلق رکھنے والے لی جی بونگ، جو ایک بار مقابلے میں حصہ لے چکے ہیں، کیانہائی  کے ایسے ہی کاروباری افراد میں سے ایک ہیں۔ گزشتہ سال ان کی کمپنی کے پروجیکٹ کو مقابلے کے فائنلز کی انٹرپرائز گروتھ کیٹیگری میں نقرئی انعام دیا گیا تھا۔ “ہماری پروڈکٹ کی تکنیکی ضروریات بہت زیادہ ہیں، اور ہمیں کافی پیشہ ورانہ صلاحیتوں کی ضرورت ہے۔ کیانہائی کے پاس ہنر مندوں کے لئے  دلکش پالیسیاں اور خدمات ہیں، اس لیے  یہاں بہترین فرد اور دماغ جمع ہوتے ہیں۔ گریٹر بے ایریا اور وسیع تر مقامی مارکیٹ تک رسائی حاصل کرنا آسان ہے۔ اسی لیے ہم یہاں مقیم ہیں،” لی جی بونگ نے کہا۔

“QSHKYIEH وہ جگہ ہے جہاں سے ہمارا خواب شروع ہوا تھا اور وہ جگہ ہوگی جہاں ہم اپنے خواب کو پورا کر سکتے ہیں،” لی جی بونگ نے کہا۔ انہوں نے جس QSHKYIEH کا ذکر کیا ہے وہ ہانگ کانگ کے کاروباری نوجوانوں کے حلقے میں بہت مشہور ہے اور بہت سے ہانگ کانگرز اسے کاروبار شروع کرنے کا پہلا انتخاب سمجھتے ہیں۔ یہاں، “ایک زنجیر میں چھ” کے مصداق  اختراعی اور کاروباری ماحول کا ایک پورا سلسلہ قائم کیا گیا ہے: اختراعی سلسلہ، صنعتی سلسلہ، کیپٹل چین، پالیسی چین، انفارمیشن چین اور ٹیلنٹ چین، اور ہانگ کانگ کی نوجوان کاروباری ٹیموں کی ایک بڑی تعدادیہاں مرتکزہے۔ مئی 2022 کے آخر تک، QSHKYIEH نے کل 591 کاروباری ٹیمیں تیار کیں ہیں۔ حال ہی میں، کیانہائی نوجوان کاروباری افراد کے لیے مزید جگہ فراہم کرنے کے لیے QSHKYIEH میں مختلف شعبوں کی تعمیر کو آگے بڑھا رہا ہے۔ اسی  کے ساتھ، معاون اقدامات کا ایک سلسلہ شروع کیا گیا ہے ،جیسے ہانگ کانگ اور مکاؤ کے نوجوانوں کے لیےخصوصی سپورٹ فنڈز کا اجراء، 15% کارپوریٹ انکم ٹیکس کا نفاذ، غیر ملکی سرمایہ کاری کی ترغیبات، دفتری کرایہ پر سبسڈی وغیرہ، جو  نوجوانوں کی کاروباری صلاحیت کو فروغ دینے کے لیے ہے۔

مقابلے کی افتتاحی تقریب میں، کیانہائی نے ہانگ کانگرز کے لیے نو (9)عملی فوائد کا اجراء کیا، جن میں ہاؤسنگ، انٹرپرینیورشپ، خدمات، روزگار، پلیٹ فارم، سائنسی اختراع، مالیات، آباد کاری، ذریعہ معاش، وغیرہ شامل ہیں، جن کا مقصد ہانگ کانگرز اور ہانگ کانگ انٹرپرائزز  کے لیے کیانہائی میں ترقی کے لئے جامع مدد فراہم کرنا اور نوجوانوں کو شینزین میں کاروبار کرنے کے لیے سہولیات فراہم کرنا ہے۔

افتتاحی تقریب میں چین کی عوامی سیاسی مشاورتی کانفرنس کی قومی کمیٹی کے رکن اور ہانگ کانگ کی قانون ساز کونسل کے رکن کینتھ فوک کائی کانگ نے کہا، “کیانہائی ہانگ کانگ-شینزن تعاون کا پل ہے اور ہانگ کانگ کے نوجوانوں کے لیے مین لینڈ میں ترقی کے لیے پہلا پڑاؤ ہے۔ مجھے امید ہے کہ ہانگ کانگ کے مزید نوجوان اپنے خوابوں کا تعاقب کر سکتے ہیں اور کیان ہائی اور گریٹر بے ایریا میں انھیں پورا کر سکتے ہیں۔”

ماخذ: کیان ہائی شینزین-ہانگ کانگ ماڈرن سروس انڈسٹری کوآپریشن زون کی اتھارٹی

‫اسٹیٹ گرڈ شان شی الیکٹرک پاور کمپنی نے معیشت کے استحکام اور معاشی ترقی کو فروغ دینے کے لئے 31 اقدامات متعارف کرائے

تائی یوان، چین، 29 جون 2022 /ژنہوا-ایشیانیٹ/– اسٹیٹ گرڈ شان شی الیکٹرک پاور کمپنی نے حال ہی میں “معیشت کو مستحکم اور متوازن بنانے میں مدد کے لئے پالیسی اقدامات کے پیکیج کے نفاذ کے لئے انیشی ایٹیو”جاری کیا ہے جس نے بجلی کی محفوظ فراہمی کو یقینی بنانے، گرڈ سرمایہ کاری کو معتدل طور پر آگے بڑھانے اور صاف توانائی کی ترقی کے لئے فعال طور پر خدمت کرنے سمیت 7 پہلوؤں میں 31 اقدامات کیے ہیں۔ یہ بجلی کی سرمایہ کاری کے ڈرائیونگ اثر کو جاری کرتا ہے اور معیشت اور معاشرے کی مستحکم اور صحت مند ترقی کی خدمت کرتا ہے۔

31 اقدامات جن میں بنیادی طور پر 41.08 ملین کلوواٹ توانائی کی بچت اور کاربن ریڈَکشن ٹرانسفرمیشن، 19.81 ملین کلوواٹ لچک کی ٹرانسفرمیشن اور “14 ویں پانچ سالہ منصوبے” کے دوران صوبہ شان شی میں کوئلے سے چلنے والے فعال بجلی یونٹوں کی 9.24  ملین کلوواٹ ہیٹنگ ٹرانسفرمیشن، اس بات کو یقینی بنانے کے لئے فروغ اور معاونت شامل ہے کہ بجلی کی فراہمی کو جلد از جلد عمل میں لایا جائے اور اسے مکمل طور پر مربوط اور مستحکم طریقے سے  تقسیم کیا گیا ہے اور لوگوں کی روزی روٹی، کوویڈ-19 کی وبا کے خلاف، عوامی خدمات اور اہم صارفین کی بجلی کی کھپت کو یقینی بنانے کیلئے بجلی کی کھپت کی نچلی لائن پر مضبوطی سے عمل پیرا ہونے کی ہر ممکن کوشش کی گئی ہے۔

ان اقدامات میں یہ بھی تجویز کیا گیا ہے کہ غذائی تحفظ کو یقینی بنانے کی بنیاد پر اسٹیٹ گرڈ شان شی الیکٹرک پاور کمپنی جو کنوؤں، پمپنگ اسٹیشنوں اور دیگر سہولیات پر توجہ مرکوز کرتی ہے اور بجلی کے لئے گرین چینلز کو بلاک کرتی ہے؛ جو موسم بہار کی آبپاشی اور خزاں کی کٹائی جیسے اہم زرعی موسموں، اعلی معیار کے کھیت جیسے اہم مقامات اور کھادوں جیسے زرعی پیداواری کاروباری اداروں پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے زرعی فصلوں اور کسانوں کی آمدنی میں اضافے میں مدد کے لئے بجلی کی فراہمی کی خدمات کو مضبوط بناتی ہے؛ اور جو 2022 کے کالج گریجویٹس بھرتی کے منصوبے کی تشکیل اور نفاذ کرتا ہے، یہ سال بھر میں معاشرے کو مختلف اقسام کی تقریبا 2600 ملازمتیں فراہم کرتا ہے۔

ماخذ: اسٹیٹ گرڈ شان شی الیکٹرک پاور کمپنی

ننشا معیاری ترقی کے لئے جی بی اے کے عزم کی جھلک پیش کرتا ہے

گوانگ ژو، چین، 29 جون 2022 /ژنہوا-ایشیانیٹ/- جنوبی چین کے گوانگ ڈونگ – ہانگ کانگ- مکاؤ گریٹر بے ایریا (جی بی اے) کے مرکز میں ننشا ہے جو دو خصوصی انتظامی علاقوں (ایس اے آرز) کے ساتھ بھی موجود ہے۔ گوانگ ڈونگ، ہانگ کانگ اور مکاؤ کے درمیان عالمی تناظر کے ساتھ جامع تعاون کو گہرا کرنے کے بارے میں گوانگ ژو ننشا کے حال ہی میں جاری کردہ ماسٹر پلان کو 24 جون کو چین کے اسٹیٹ کونسل انفارمیشن آفس کی جانب سے منعقدہ پریس کانفرنس میں آگاہ کیا گیا۔

ننشا کے جغرافیائی حالات سازگار ہیں جن میں وسیع ترقیاتی جگہ اور ٹھوس صنعتی بنیاد ہے۔ چین کے نیشنل ڈویلپمنٹ اینڈ ریفارم کمیشن کے لیڈنگ پارٹی ممبرز گروپ کے رکن گوو لانفینگ نے کہا کہ تعاون اور ترقی کی شدید خواہش کے تحت ننشا کو گوانگ ڈونگ، ہانگ کانگ اور مکاؤ کے درمیان ہمہ جہت تعاون کو فروغ دینے میں منفرد فوائد حاصل ہیں۔

چین کے سب سے کھلے علاقوں میں معاشی طور پر متحرک جی بی اے اس بات کا اظہار کرتا ہے کہ کس طرح ملک اپنے کھلے معاشی نظام کو عالمی مالیاتی تعاون کی اعلی سطح کی راہ پر گامزن کرتا ہے جس سے گوانگ ڈونگ، ہانگ کانگ اور مکاؤ، شینزن میں کیانہائی اور زوہائی میں ہینگکن کے درمیان جی بی اے کی قیادت میں زیادہ ہم آہنگی پیدا ہوتی ہے۔ ننشا کے لئے خواہش مند منصوبے نے اعلی معیار کے ساتھ جی بی اے کی تعمیر میں ایک اور اہم سنگ میل کی نشان دہی کی۔ گوانگ ژو شہر کی ننشا ڈسٹرکٹ پیپلز گورنمنٹ کے مطابق یہ ضلع کئی دہائیوں کی ترقی کے بعد ایک بار پھر زیر بحث آیا ہے۔

پریس کانفرنس کے مطابق اس منصوبے میں ننشا کو سائنس ٹیک اختراع کے لئے صنعتی تعاون کے اڈوں کی تعمیر میں تیزی لانے کی ضرورت پر زور دیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ، ضلع کو اس مقصد کے لئے بڑے لاٹ فارمز کے آغاز کے ذریعے سائنس ٹیک اختراع کے لئے گوانگ ڈونگ ہانگ کانگ مکاؤ مشترکہ کوششوں کو تقویت دینے اور عالمی تناظر کے ساتھ اعلی صلاحیت کے حامل افراد کو تیار کرکے ہائی ٹیک صنعت کو فروغ دینے کی ضرورت تھی۔ مزید برآں اس منصوبے میں کہا گیا ہے کہ ننشا کو اعلیٰ ٹیکنالوجی میں فرموں اور ٹیلنٹ کے لئے ہنر مند بنانے کے لئے ریاست کی حوصلہ افزائی کرنے والی صنعتوں میں اسٹارٹ اپ زون پر مبنی کاروباری ادارے 15 فیصد کی کم شرح پر کارپوریٹ انکم ٹیکس کے حقدار ہوں گے اور ننشا میں کام کرنے والے ہانگ کانگ اور مکاؤ شہریوں کی انفرادی آمدنی ٹیکس میں اضافے سے مستثنیٰ ہوگی۔ مزید برآں، ننشا نے سیمی کنڈکٹر اور مربوط سرکٹ صنعتوں کی ترقی کو فروغ دینے کے لئے متعدد اقدامات کا انکشاف کیا۔ اس طرح پائلٹ فری ٹریڈ ایریا نو محاذوں پر معاونت فراہم کرے گا جس میں بڑے منصوبے شروع کرنے اور کاروباروں کی مالی معاونت سے لے کر مربوط سرکٹ انڈسٹریل چین کو آگے بڑھانے اور پیداوار میں بجلی کے استعمال پر سبسڈی دینے سے لے کر کمپنیوں میں آٹوموٹو گریڈ کے معیارات کی حوصلہ افزائی کرنا شامل ہے۔

ننشا اب 400 سے زائد مصنوعی ذہانت (اے آئی) کمپنیوں کا گھر ہے کیونکہ یہ گوانگژو-شینزن-ہانگ کانگ سائنس اینڈ ٹیکنالوجی انوویشن کوریڈور کو اپنے ہم منصب زوہائی کو مکاؤ سے جوڑتی ہے۔

ایک مقامی انٹیلی جنس ڈویلپر ڈیپ مرر کے شریک بانی کاو تیانتیان نے کہا کہ نانشا میں کاروبار شروع کرنے کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ ضلع نے اے آئی کی ترقی کے لئے صنعتوں، یونیورسٹیوں اور تحقیقی اداروں کے درمیان کافی ہم آہنگی پیدا کی ہے۔

حالیہ برسوں کے دوران ننشا میں شاندار تحقیقی اداروں اور جدید بڑے پیمانے پر سائنسی سہولیات کی دولت میں اضافہ ہوا ہے جس کا مقصد بنیادی سائنس اور جدید ترین ٹیکنالوجی میں ترقی کو فروغ دینا ہے۔ان نئے آنے والوں کو چنگ شینگ اور 99 مربع کلومیٹر کے ننشا سائنس سٹی میں جدت طرازی اور ٹیکنالوجی کی بنیاد کی طاقتوں سے فائدہ ہوگا جو ابھی زیر تعمیر ہے۔ سن یات سین یونیورسٹی کے انسٹی ٹیوٹ آف فری ٹریڈ زونز کے ڈائریکٹر فو ژینگ پنگ نے کہا کہ سائنس ٹیک اختراع میں اپنی حالیہ رفتار کے ساتھ ننشا  نےلیٹ اسٹارٹر کے طور پر طاقت کا مظاہرہ شروع کردیا ہے۔

اعلی عالمی ٹیک کمپنیوں کا ایک میگنیٹ، سلیکون ویلی، سان فرانسسکو بے ایریا سے کہیں زیادہ اہم اثر و رسوخ حاصل کرتا ہے۔عالمی شہر اس کے سب سے مضبوط حریف بننے کی خواہش رکھتے ہیں۔ ننشا میں سلور لائننگ یہ ہے کہ دنیا بھر کے نوجوان جدت طرازی اور کاروباری صلاحیتوں کو فروغ دینے کے لئے اسے ایک مثالی جگہ پاتے ہیں۔

2017 میں قائم جی بی اے کے نوجوانوں کے لئے ننشا پر مبنی کاروباری انکیوبیٹر ٹائم ٹیبل نے 40 سے زائد ہانگ کانگ اور مکاؤ اسٹارٹ اپ کو جدت لانے اور ترقی کرنے میں مدد دی ہے۔اسے ڈیجیٹل ٹیکنالوجی اور تفریح اور نئی اقسام کی کھپت اور ریٹیل جیسے شعبوں کو فروغ دینے کے لئے انکیوبیشن خدمات پیش کرنے کے لئے ڈیزائن کیا گیا ہے۔

ٹائم ٹیبل کے بانی وو جیاہوئی نے کہا کہ کاروبار شروع کرنے کے خواہشمندافراد کے لیے مناسب وقت اور فعال آب و ہوا زیادہ اہم نہیں ہو سکتی، ٹیکنالوجی فارورڈ جی بی اے مارکیٹ کے زبردست مواقع فراہم کرتا ہے اور کاروباری خدمات کی معاونت کی ایک مکمل رینج اور ایک بے مثال کاروباری ماحول سے آگے پیداواری عوامل کا بے لگام بہاؤ دیکھتا ہے جو ننشا کو پیش کرنا پڑتا ہے۔یہ سب کچھ ضلع کو ہانگ کانگ اور مکاؤ کاروباری افراد کے لئے ایک اچھا انتخاب بناتا ہے۔ ”

ترقی کے مواقع کے علاوہ جدید شہری ماحول بھی صلاحیتوں کو برقرار رکھنے کی اہلیت رکھتا ہے۔شہر کی “سافٹ پاور” کے لازمی جزو کے طور پر اسمارٹ سٹی مہم جی بی اے کو تیز رفتار ترقی کے راستے پر لاتی ہے۔اور ننشا اپنا روشن پہلو دکھا رہا ہے کیونکہ لوگوں کے  ذریعہ معاش کو اختراعی ٹیکنالوجیز کے ذریعے بااختیار بنایا جا رہا ہے، جس میں بڑے ڈیٹا سے لے کر کلاؤڈ کمپیوٹنگ تک شامل ہیں۔

ننشا کے اسمارٹ سٹی پروگرام کے ایک رہنما کے مطابق ضلع زیادہ دیکھ بھال کرنے والی اور ذہین منزل کی طرف بڑھ رہا ہے۔اس کا مطلب ہے کہ یہ یونیورسل شہری ڈیٹا کے تاثر کے لئے ٹھوس بنیاد رکھے گا اور تمام اسمارٹ آپریشنز کے لئے ایک مرکز تعمیر کرے گا۔ایسا کرتے ہوئے تعلیم، صحت کی دیکھ بھال اور بزرگوں کی دیکھ بھال کی خدمات کو زیادہ تکنیک پر مبنی اور قابل رسائی بنانے کے لئے ایک جامع نظام تیار کیا جانا طے ہے اور ہانگ کانگ اور مکاؤ کے شہریوں کے ساتھ ساتھ باقی دنیا کے پیشہ ور افراد کے لئے بھی خدمات کو مزید جدید بنایا جائے گا۔

ماخذ: ننشا ڈسٹرکٹ پیپلز گورنمنٹ گوانگژو شہر

State Grid Shanxi Electric Power Company introduced 31 measures to stabilize the economy and promote economic development

TAIYUAN, China, June 29, 2022 /Xinhua-AsiaNet/–The State Grid Shanxi Electric Power Company recently issued the “Initiative for the implementation of a package of policy measures to help steady and stabilize the economy”, which has taken 31 measures in 7 aspects including making every effort to ensure the safe supply of electricity, moderately advancing grid investment, and actively serving the development of clean energy. It releases the driving effect of the investment of electricity and serves the stable and healthy development of the economy and society.

The 31 measures which mainly include overall support for the 41.08 million kilowatts energy-saving and carbon reduction transformation, 19.81 million kilowatts of flexibility transformation, and 9.24 million kilowatts of heating transformation of active coal-fired power units in Shanxi Province during the “14th Five-Year Plan” period, promote and support to ensure that the power supply will be put into operation as soon as possible and can be fully integrated and fully and stably distributed, and make every effort to ensure people’s livelihood, anti-epidemic of COVID-19, public services and electricity consumption of important users and firmly adhere to the bottom line of electricity consumption for people’s livelihood.

The measures also propose that, based on ensuring food security, the State Grid Shanxi Electric Power Company which focusing on high-standard farmland supporting wells, pumping stations and other facilities unblocks green channels for electricity; which focusing on important agricultural seasons such as spring irrigation and autumn harvest, important places such as high-standard farmland, and agricultural production enterprises such as fertilizers, it strengthens power supply services to help increase agricultural harvests and farmers’ incomes; and which formulating and implementing the 2022 college graduates recruitment plan, it provides about 2,600 jobs of various types to the society throughout the year.

Source: State Grid Shanxi Electric Power Company

Youths Dream Big in Qianhai Integrating into the Greater Bay Area

SHENZHEN, China, June 29, 2022 /Xinhua-AsiaNet/– On June 27, “2022 Qianhai Guangdong-Hong Kong-Macao-Taiwan Youth Innovation and Entrepreneurship Competition” was officially kicked off, marking the start of series of activities “Shenzhen-Hong Kong Cooperation to Create the Future” to celebrate the 25th anniversary of the return of Hong Kong to the motherland, according to Authority of Qianhai Shenzhen-Hong Kong Modern Service Industry Cooperation Zone.

For many ambitious young people, this promises more opportunities and a better start. Sunny Zhou, a young lady from Guangdong, is director of a Macao-funded company. Her project won the silver medal in the finals of the competition last year. “The contest has provided us an opportunity to meet many industry experts and entrepreneurial partners from different places, and has brought us new ideas for entrepreneurship,” said Sunny Zhou.

To provide greater support to participants, this year’s competition is fully upgraded. The winning projects can directly advance to the Industry Finals of China (Shenzhen) Innovation and Entrepreneurship Competition. Professional mentors are introduced to provide one-on-one counseling. Besides, the winners can be given priority to settle in Qianhai Shenzhen-Hong Kong Youth Innovation and Entrepreneur Hub (QSHKYIEH) and enjoy relevant preferential policies. The event will also carry out activities such as Creator Camp, Entrepreneurial Counseling Sessions and Investment Matchmaking Sessions to build a good platform for the youth to communicate, cooperate and advance. The competition has set four sub-regions, with a total prize of more than CNY7 million.

The event has been held for six consecutive years since 2016, taking in altogether about 6,000 entries, including nearly 3,000 from Hong Kong, Macao and other places. By promoting the transformation of relevant scientific and technological achievements, Qianhai has become a “dream-big place” for many youths.

Lee Jee Bong from Hong Kong, who has once taken part in the contest, is one of such entrepreneurs in Qianhai. Last year, the project of his company was awarded the silver prize in the Enterprise Growth Category of the competition finals. “The technical requirements of our product are high, and we need plenty of professional talents. Qianhai has policies and services appealing to talents, so excellent heads and minds gather. It is easy to get access to the Greater Bay Area and the broader domestic market. That’s why we are based here,” said Lee Jee Bong.

“QSHKYIEH is where our dream started and will be the place where we can fulfill our dream,” said Lee Jee Bong. The QSHKYIEH he mentioned is well-renowned in Hong Kong’s entrepreneurial youth circle and considered by many Hong Kongers as the first choice to start a business. Here, a whole chain of innovation and entrepreneurship ecosystem has been established with “six chains in one”: innovative chain, industrial chain, capital chain, policy chain, information chain and talent chain, and a large number of young entrepreneurial teams from Hong Kong have concentrated here. By the end of May, 2022, QSHKYIEH has incubated a total of 591 entrepreneurial teams. Recently, Qianhai continues to

advance the construction of various areas for the QSHKYIEH to provide more space for young entrepreneurial people; meanwhile, a series of support measures such as issuing special support funds for Hong Kong and Macao youth, implementing 15% corporate income tax, foreign investment incentives, office rent subsidies, etc. to shore up youth entrepreneurship.

At the launching ceremony of the competition, Qianhai released nine practical benefits for Hong Kongers, covering housing, entrepreneurship, services, employment, platform, scientific innovation, finance, settlement, livelihood, etc., aiming to provide comprehensive support for Hong Kongers and Hong Kong enterprises to develop in Qianhai, and to provide facilitations for youths to do business in Shenzhen.

“Qianhai is the bridgehead of Hong Kong-Shenzhen cooperation and the first stop for Hong Kong youth to develop in the mainland. I hope more Hong Kong youth can pursue their dreams and fulfill them in Qianhai and the Greater Bay Area,” said Kenneth Fok Kai-kong, a member of the National Committee of the Chinese People’s Political Consultative Conference and a member of the Hong Kong Legislative Council, at the launch ceremony.

Source: Authority of Qianhai Shenzhen-Hong Kong Modern Service Industry Cooperation Zone

PTA Takes Up Blocking of Official Accounts of Pakistan Embassies in India with Twitter

The Pakistan Telecommunication Authority (PTA) said Wednesday that it has taken up the issue of India blocking official Twitter accounts of Pakistan embassies and other notable figures in the country with Twitter.

In a tweet, the telecom regulator said that it has urged Twitter to reconsider its biased suppression of information and restore official Pakistani accounts for viewing in India.

Earlier, the Foreign Office had confirmed that the official Twitter handles of Pakistani missions in Iran, Egypt, Turkey, and the United Nations were banned in India.

Urging Twitter to restore immediate access to the accounts, Foreign Office spokesperson Asim Iftikhar had said that diminishing space for plurality of voice and access to information in India is extremely alarming.

Source: Pro Pakistan

Pak ambassador presents credentials to King of Belgians

The Ambassador of Pakistan to Belgium, Dr. Asad Majeed Khan, presented credentials to the King of Belgians Philippe Leopold Louis Marie in a graceful ceremony held at the Royal Palace of Brussels.

The Ambassador conveyed the greetings and best wishes of the President and the Prime Minister of Pakistan to the King of Belgians.

Reaffirming the importance Pakistan attaches to its friendly relations with Belgium, the Ambassador expressed his determination to work hard for building a more strong, vibrant and diverse partnership between Pakistan and Belgium.

The King reciprocated the warm greetings and extended best wishes for the welfare and prosperity of the people of Pakistan.

Source: Radio Pakistan